انڈونیشی مسلمانوں سےبنیاد پرستوں کو سبق سیکھنا چاہئے

انڈونیشی مسلمانوں سےبنیاد پرستوں کو سبق سیکھنا چاہئے


گوتم چودھری

امن اور ہم آہنگی موجودہ دور میں دنیا کے لئے ایک سب سے اہم مسئلہ ہے کیونکہ بیشتر ممالک نے حالیہ دنوں میں معاشی خوشحالی حاصل کی ہے لیکن جدید طرز زندگی انہیں امن فراہم کرنے کے لئے نااہل ثابت ہوا ہے۔ صرف یہی نہیں جدید طرز زندگی کے بعد ہم آہنگی کو بھی نقصان پہنچا ہے۔
دنیا کے کچھ مسلم اکثریتی ممالک نے اپنے شہریوں کی معاشی ترقی اور طرز زندگی کو بہتر بنایا ہے ، لیکن وہ امن اور ہم آہنگی برقرار رکھنے میں ناکام رہے ہیں۔ ایسے ممالک میں ایران ، پاکستان ، شام ، عراق ، مصر وغیرہ شامل ہیں۔ اس کے برعکس دنیا میں کچھ ایسے مسلم ممالک ہیں جنہوں نے اپنی خوشحالی کے ساتھ امن اور ہم آہنگی کی مثال قائم کی ہے۔اس میں پہلا نام انڈونیشیا کا آتا ہے۔ انڈونیشیا دنیا کا سب سے زیادہ مسلم آبادی والاملک ہے۔انڈونیشیا میں ہندوستانی تہذیب وثقافت کی طرح ہی کثرت میں وحدت دیکھنے کو ملتا ہے۔ یہاں 700 سے زیادہ زبانیں بولی جاتی ہیں لیکن ان کی مختلف زبانیں ملک کے ایک لہجے کی تقلید کرتی ہیں۔ جغرافیائی طور پر انڈونیشیا 17000 جزیروں پر مشتمل ملک ہے ، یہاں تقریبا 267 ملین افراد آباد ہیں۔ انڈونیشیا میں تقریباً 230 ملین مسلمان ، 30 ملین عیسائی۔ صرف یہی نہیں ، یہاں ہندوؤں اور بودھوں کی بھی بڑی آبادی ہے۔ گویا ہندو اور بدھ مت یہاں اقلیت ہیں لیکن وہ بڑی ہم آہنگی کے ساتھ ملک کی خوشحالی میں حصہ لے رہے ہیں۔ انڈونیشیا کی انتظامیہ انہیں اپنی عقیدوںکے لئے ان سے کبھی بھی امتیازی سلوک نہیں کرتی ہے۔
انڈونیشیا ایک جمہوریہ ملک ہے۔ اس نے خود کو ایک مشترکہ قوم کی حیثیت سے دنیا کے سامنے پیش کیا ہے۔ رواداری اور بقائے باہمی یہاں کو شہریوں میں بھری ہوئی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ لاکھوں کوششوں کے بعد بھی اسلامی بنیاد پرستی یہاں پنپ نہیں پا سکی ہے۔ بڑی ذمہ داری کے ساتھ تمام انڈونیشی جمہوری اقدار کی پیروی کرتے ہیں ایک دوسرے کے عقیدوں کا احترام کرتے ہیں۔ خوشحالی ، ترقی ، آزادی ، انصاف ، برادری اور مساوات کو یہاں ترجیح دی جاتی ہے۔ شہریوں کے حقوق کو برقرار رکھنا اور ان کی ضروریات کو پورا کرنا حکومت انڈونیشیا کی ترجیحات میں شامل ہیں۔ انڈونیشیا میں اسلام کی آمد 15 ویں صدی کے دوران مختلف مسافروں کے ذریعے ہوئی۔ اسلام کے نظریات اور مثبت سوچ رکھنے والے علمائے کرام نے انڈونیشیا میں اس فرقے کا پرچار کیا۔ آہستہ آہستہ انڈونیشیا میں اسلام کے ماننے والوں کی تعداد میں اضافہ ہونے لگا۔ لوگوں نے اپنے آباؤ اجداد کے مذاہب کو ترک کرتے ہوئے اسلام قبول کرنا شروع کیا ، لیکن انڈونیشیوں نے کبھی بھی اپنی اخلاقی نقطہ نظر اور افہام و تفہیم سے سمجھوتہ نہیں کیا۔ اسی کے ساتھ مسلم رہنماؤں نے بھی اپنی ذمہ داریوں کو نبھاتے ہوئے مواقع اور بھرپور سہولیات کی فراہمی کی پوری کوشش کی۔ یہ دنیا کے مسلمانوں کے لئے مثالی ہے۔
انڈونیشیا میں اسلام کی ترقی میں مثبت پہلو ہمیشہ ہی مرکز بنائے رکھا۔ جو اپنے پیروکاروں کو امن اور محبت پر عمل پیرا ہونے کی تعلیم دے رہی ہے۔ اسلام کی اصل تصویر نے ملک میں محبت ، شفقت اور امن کو بڑھانے میں مدد فراہم کی۔ ملک کے سیاسی رہنماؤں اور علمائے کرام نے نہ صرف اسلام کی صحیح ترجمانی پیش کی بلکہ لوگوں کے سامنے اسلام کا باہمی موجود چہرہ بھی پیش کیا۔ اس کی وجہ سے ملک میں ترقی اور معاشی خوشحالی کے ساتھ ساتھ امن ، رواداری اور جمہوری کی جڑیں مضبوط ہورہی ہیں۔ انڈونیشیا کا اسلام رواداری ، قبولیت ، آزادی ، انصاف ، مساوات اور بھائی چارے کے فروغ کے طور پر ابھر رہا ہے۔ انڈونیشیا کے لوگ قرآن و حدیث کو دل و جان سے سمجھتے ہیں اور اپنی زندگی میں اس کا اطلاق کرتے ہیں۔ وہ نہ صرف صحیح اسلامی اصولوں کا مطالعہ کرتے ہیں بلکہ اپنے ملک انڈونیشیا کے ساتھ اپنا فرض اور ذمہ داری بھی نبھاتے ہیں۔ قرآن پاک میں کہا گیا ہے کہ سب سے کامل شخص وہ ہے جو دوسرے لوگوں سے محبت اور شفقت کے ساتھ سلوک کرتا ہے۔ یہ واقعی انڈونیشیا کے لوگوں کی زندگیوں میں سرایت کر رہا ہے۔
اسلام سے پہلے انڈونیشیا میں ہندو اور بدھ مت کے عقائدکے زیادہ ماننے والے تھے۔ اس وقت یہاں ہندو اور بدھ مت کی ایک اچھی خاصی تعداد آباد ہے۔ ان دونوں برادریوں کے لوگ یہاں خوشحال ہیں اور خوشی خوشی زندگی گزار رہے ہیں کیونکہ انڈونیشی مسلمانوں نے ہندو مت اور بدھ مت کے ورثے کو اپنی ثقافت سے ملا دیا ہے۔ انڈونیشیا کے مسلمان فطرت کے لحاظ سے لبرل ہیں اور بنیاد پرستی اور انتہا پسندی کو نظر انداز کرتے ہوئے اسلام کی اصل تشریح کے ساتھ لبرل راہ پر چلتے ہیں۔ متعدد مطالعات سے انکشاف ہوا ہے کہ اسلام کے بنیاد پرست پروپیگنڈا کرنے والوں انڈونیشیا نے سخت مخالفت کی ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ یہاں سب سے زیادہ آبادی ہونے کے باوجود مسلمان اتنے پاکستان یا ایران کی طرح جارحانہ نہیں ہیں ۔ اگرچہ انڈونیشیا میں 2002 میں بالی پر بمباری جیسے انتہا پسندانہ اور بنیاد پرست حملے ہوئے ہیں جس میں ہزاروں افراد ہلاک ہوئے تھے ، لیکن یہاں کے عام عوام نے اسے کبھی بھی تسلیم نہیں کیا۔
انڈونیشیا کے مسلمانوں کی پرامن زندگی کے بنیادی نظریات میں سے ایک آزاد خیالات اور بنیاد پرست اور انتہا پسندانہ تحریکوں اور اقدامات کو مسترد کرنا ہے۔ لبرل انڈونیشیا کے مسلمانوں نے اپنے رہنماؤں کی حمایت ، جو انصاف ، آزادی ، برادری اور ملازمت کی فراہمی کے مساوی مواقع فراہم کرنے اور ہر شہری کو ہر ذات اور مذہب کے تعصبات سے انکار کرنے میں بڑا کردار ادا کررہے ہیں۔ ان کا خیال ہے کہ ملازمتوں اور مواقع کی مساوی تقسیم کو ذات پات اور مسلک کے مابین فرق کیے بغیر انتہا پسندی اور بنیاد پرست نظریے سے ختم کیا جاسکتا ہے۔ مسلمان قوموں کو انڈونیشیا سے سیکھنا چاہئے۔ اسی کے ساتھ ہندوستانی مسلمانوں کو بھی انڈونیشیا کی اسلامی اقدار کا مطالعہ کرنا چاہئے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Translate »