این پی آر میں ایسا کچھ بھی نہیں جو آپ کو خوفزدہ کرے

این پی آر میں ایسا کچھ بھی نہیں جو آپ کو خوفزدہ کرے

حسن جمالپوری

این پی آر کا مقصد ایک جامع شناختی ڈیٹا بیس بنانا ہے جس میں ملک میں رہنے والے ہر عام باشندے کی مکمل شناخت اور دیگر تفصیلات درج رہے۔ اس سے سرکاری اسکیموں ، پروگراموں کے تحت فوائد اور خدمات کو بہتر ہدف بنانے میں مدد ملے گی ، اسکیم کو بہتر بنایا جاسکے گا اور شناختی دھوکہ دہی سے بچایا جاسکے گا۔ نیشنل پاپولیشن رجسٹر(این پی آر)  کے معاملے میںمرکزی وزارت داخلہ نے  صفائی دی ہے۔ تاہم ، اس سے پہلے آدھار کے بارے میں بھی یہی کہا گیا تھا۔ مجموعی طور پر ، ہندوستانی شہریوں کے لئے بہت سارے اقسام کے شناختی کارڈ موجود ہیں ، لیکن حکومت کی طرف سے انجام دی جانے والی نئی شناختوں اور رجسٹروں  نے عوام میں عدم اعتماد کا ماحول پیدا کردیا ہے۔ دراصل ہم اس عدم اعتماد کو دور کرنے کی کوشش کرنے والے ہیں۔ آئیے تو سمجھتے ہیں کہ این پی آر کیا ہے اور اس سے کیا فائدہ ہونے والا ہے۔

 نیشنل پاپولیشن رجسٹر (این پی آر) ایک اہم دستاویز ہے جسے آسام کو چھوڑ کر تمام ریاستوں ، مرکز کے ماحت ریاستوں میں اپریل سے ستمبر 2020 کے دوران مردم شماری 2021 کے ہاؤس لسٹنگ فیز کے ساتھ اپ ڈیٹ کیا جانا  تھا۔ اس کا مقصد ایک دہائی کے دوران آبادی کی نمو کو دیکھنا ، ہندوستانی شہریوں کی حیثیت اور ان کی روزی روٹی کی نشاندہی کرنا اور بہتر سہولیات مہیا کرنا ہے تاکہ حکومت ہند کمزور لوگوں کے لئے فلاحی اسکیموں کو صحیح لوگوں تک پہنچانے کی کوشش کرے۔ شہریوں کے تحفظات سے نمٹنے کے لئے مرکزی وزارت داخلہ نے واضح کیا کہ ہندوستانی شہریوں کو این پی آر میں اپنا  رجسٹریشن کرانے کے لئے کوئی دستاویزات پیش کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ ان کے دستاویزی ثبوتوں کی مدد سے حاصل کردہ معلومات خود کو این پی آر میں اندراج کرنے کے لئے کافی ہوں گی۔

 دوسری بات این پی آر کوئی حالیہ چیز نہیں ہے اور نہ ہی مودی سرکار نے اسے اپنی طرف سے مسلط کرنے کی کوشش کی ہے۔ نیشنل پاپولیشن رجسٹر کے لئے اعداد و شمار سب سے پہلے سنہ 2010 میں ہندوستان کی مردم شماری کے ہاؤس لسٹنگ فیز کے ساتھ 2011 میں یوپی اے 2 حکومت نے نریندر مودی کی زیرقیادت موجودہ حکومت سے ٹھیک پہلے اکٹھا کیا تھا۔ ایسا اس لئے کیا گیا تاکہ حکومت دستاویزات کی ضرب کو کم کرنے اور نقل سے بچنے کے لئے ہر شخص کا ایک آن لائن ڈیٹا بیس تشکیل دے سکے جبکہ وظائف ، نوکریوں ، مراعات ، اشیائے خوردونوش اور کھانا پکانے کے گیس وغیرہ کی سہولت فراہم کرے اور دوسرے بہت سے مقاصد کو حاصل کرسکے۔

تیسری سب سے اہم چیز ملک کی حفاظت اور استحکام ہے۔ اس رجسٹریشن سے ہر شہری کی شناخت کو یقینی بنایا جاسکتا ہے اور دراندازوں اور غیر ملکی ایجنٹوں کو الگ تھلگ کیا جاسکتا ہے۔ موجودہ این پی آر کسی بھی شخص کے مجرمانہ اور پرتشدد مقدمات میں ملوث ہونے کا پتہ لگانے کاسب سے مستند اور قابل اعتماد ذریعہ ثابت ہوسکتا ہے۔ اس سلسلے میں امریکہ کا سوشل سیکیورٹی نمبر اور کارڈ ایک بہترین مثال ہے۔ سوشل سیکیورٹی نمبر امریکی انتظامیہ کو اپنے شہریوں کی دیکھ بھال کرنے میں مدد فراہم کررہا ہے۔ نیز ، کسی بھی ہنگامی صورتحال کا سامنا کرنے میں اس ضابطہ کا ایک اہم کردار ہے۔

این پی آر کی مخالفت کرنے والوں کو یہ یاد رکھنا چاہئے کہ ملک کے ہر شہری کو 2004 میں ترمیم شدہ ، شہریت ایکٹ 1955 کے سیکشن 14 اے کے مطابق ہندوستانی شہری کو قومی رجسٹر (این آر آئی سی) میں رجسٹریشن لازمی ہے۔ ہندوستان کے ایک ذمہ دار شہری کی حیثیت سے اپنی ذمہ داری ادا کرتے ہوئے بغیر کسی احتجاج اور شور شرابہ کے این پی آر کے رجسٹریشن میں حصہ لیں۔ رجسٹریشن کے لئے اپنی مستند تفصیلات درج کریں۔ اس کا دور رس اثر بہتر ہونے والاہے۔

این پی آر کے اعلان کے بعد اقلیتی برادری کا احتجاج سیاسی ہی لگ رہا ہے۔۔ تاہم توجہ دینے سے پتہ چلتا ہے کہ این پی آر کے ذریعے جمع کردہ ڈیٹا کو آخر کار عوام کے مفاد کے لئے استعمال کیا جائے گا۔ ہندوستانی شہری کی شناخت مختلف دستاویزات کے ذریعے پہلے ہی جمع کی جا چکی ہے جس میں ووٹر شناختی کارڈ ، آدھار وغیرہ شامل ہیں۔ پریشان ہونے کی ضرورت نہیں۔ این پی آر صرف دستیاب تمام ذاتی معلومات اور ڈیٹا کو سنکرینائز اور مرتب کرے گا۔ ایک ہندوستانی شہری ہونے کے باوجود ضروری دستاویزات سے محروم کی وجہ ان لوگوں کے لئے بہت سے راستےدستیاب کردیئے گئے ہیں، جنہیں آسانی سے ایکسیس کیا جا سکتا ہے۔ جعلی دستاویزات کے تحت شہریت کا دعوی کرنے والے اور اپنے مفاد کے لئے سرکاری رقم چوسنے والے افراد کو ہی فکر کرنے کی ضرورت ہے۔

مجموعی طور پر این پی آر سے گھبرانے کی ضرورت نہیں ہے۔ اس کے لئے کوئی علیحدہ سند فراہم کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ شہریت کے ثبوت کے تمام درست سرٹیفکیٹ کا ڈیٹا چیک کرنے اور تیار کرنے کا یہ صرف ایک طریقہ ہے۔ کسی کو بھی اس سے ڈرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ اگر کوئی یہ سوچتا ہے کہ اس سے کسی کی شہریت خطرے میں پڑ جائے گی تو یہ بے بنیاد ہے۔ ویسے خوف فطری ہے۔ کیونکہ آسام میں اس طرح کے پروگرام کے نتائج زیادہ اچھے نہیں رہے ہیں ، لیکن مرکزی حکومت آسام میں موجود تضادات کو دور کرنے کی پوری کوشش کر رہی ہے۔ لہذا ، مرکزی وزارت داخلہ بار بار لوگوں کو یقین دلا رہی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Translate »