سوشل میسنجر سائٹ استعمال کرتے وقت سماجی و قومی سلامتی کا خیال رکھیں

سوشل میسنجر سائٹ استعمال کرتے وقت سماجی و قومی سلامتی کا خیال رکھیں

گوتم چودھری،رانچی


انٹرنیٹ کی آزادی اور عالمی توسیع نے ہمارے لئے مواصلات کے بہت سارے اختیارات کھول دیئے ہیں۔ ان اختیارات کو استعمال کرکے ہم دنیا بھر کی معلومات سے لطف اندوز ہو رہے ہیں۔ یہ مواصلاتی میڈیا ہمیں ایک نئے انداز میں زندگی گزارنے کا درس دے رہا ہے۔ موجودہ دور میں یہ عالمی ترقی کا ایک معیار بن گیا ہے۔ ایسے دور میں جہاں ہمیں آسانی سے بہت ساری قسم کی سہولیات میسر ہو رہی ہیں ، کچھ احتیاط بھی ضروری ہے۔
دنیا کے بہت سے کارپوریٹ ہاؤسز نے اپنے کاروباری مفادات میں انٹرنیٹ کی تیز رفتار نقل و حرکت کو استعمال کرنے کے لئے سوشل میڈیا نیٹ ورکس قائم کیے ہیں۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ یہ پلیٹ فارم سیاسی حدود کو قبول نہیں کرتا ہے لیکن یہ سوشل میڈیا کمپنی کے مالک کی جو قومیت ہوتی ہے یا جہاں اس کا ہیڈکوارٹر ہوتا ہے اس ملک کی قومی مفاد کا وہ پورا خیال رکھتا ہے۔ ایسی صورتحال میں ہم ان سوشل سائٹس کے صارفین کو بھی اپنے قومی مفادات کو ذہن میں رکھنے کی ضرورت ہے۔ وہیں یہ بھی اہم ہے کہ اس کے استعمال سے ذاتی نقصان نہیں پہنچے۔
واٹس ایپ نے حال ہی میں صارفین کے اپنے ڈیٹا منیجمنٹکے طریقے میں کچھ اہم تبدیلیاں کی ہیں۔ اس تبدیلی کے تحت اگر کوئی شخص (کاروباری اکاؤنٹ رکھنے والا) نئی رازداری کی پالیسی کو قبول کرتا ہے تو اس کے ڈیٹا کا ایک حصہ فیس بک کے ساتھ شیئر کیا جائے گا۔ واٹس ایپ کے اعلان کے بعد سے ہی واٹس ایپ کو پوری دنیا میں واٹس ایپ صارفین کی طرف سے شدید مخالفت کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ سوشل میڈیا پر شدید ناراضگی کے درمیان بہت سارے صارفین نے واٹس ایپ چھوڑنے اور ٹیلیگرام ، سگنل اور بی آئی پی سمیت دیگر متبادل میسجنگ ایپس استعمال کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ میں آپ کو بتاتا چلوں کہ وہ تمام متبادل پیغام رسانی والے ایپس ایک جیسی سہولیات اور کام کرنے کی صلاحیت فراہم کرتی ہیں۔
BIP ایپ ایک ایپلیکیشن سافٹ ویئر ہے جو آپ کے دوستوں اور کنبہ والوں کو پیغامات اور فعال کال کرنے میں مدد کرتا ہے۔ آج ہم BIP ایپ کے بارے میں بات کرنے جارہے ہیں۔ ہندوستان جیسے ملک کے شہریوں کو یہ ایپ استعمال نہیں کرنا چاہئے یا اسے انتہائی احتیاط کے ساتھ استعمال کرنا چاہئے۔ بی آئی پی ایپ خود کو ایک محفوظ اور آسانی سے دستیاب سوشل پلیٹ فارم کے طور پر پیش کرتی ہے۔ دراصل بی آئی پی ایپلی کیشن ، ترکی ایک میسجنگ پلیٹ فارم ہے جو ایک بڑے موبائل آپریٹر کے ذریعہ تخلیق کیا گیا ہے۔ ترکی میں بی آئی پی میسجنگ ایپ کی ابتدا کی وجہ سے اس ایپ نے مسلمانوں میں بڑے پیمانے پر مقبولیت حاصل کی ہے۔ بی آئی پی ایپ ہر گزرتے دن کے ساتھ اپنے صارف کی تعداد میں اضافہ کررہی ہے۔ ترکی کے اعلی اداروں بشمول ترک صدر اور وزارت دفاع نے اپنے واٹس ایپ گروپس کو بی آئی پی میں منتقل کردیا ہے۔ گوگل پلے اسٹور میں بنگلہ دیش ، بحرین ، پاکستان ، قطر ، عمان اور سعودی عرب وغیرہ جیسے مسلم ممالک میں بی آئی پی پہلے نمبر پر ہے۔ اس کی مقبولیت کا اندازہ اس حقیقت سے لگایا جاسکتا ہے کہ اسے مجموعی طور پر 65 ملین بار ڈاؤن لوڈ کیا گیا ہے۔
کسی فیصلے پر پہنچنے سے پہلے ہمیں بی آئی پی کے دو پہلوؤں کا تجزیہ کرنا چاہئے۔ پہلا اور اہم نکتہ ایپ پر معروف ترک موبائل آپریٹر کا کنٹرول ہے اور دوسرا صدر انتظامیہ سمیت واٹس ایپ سے بی آئی پی میں ترک انتظامیہ کا بڑے پیمانے پر منتقلی ۔ ایپ کے بارے میں دستیاب تفصیلات سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ترک حکومت ایپ کے کام پر بیک ڈور کنٹرول رکھتی ہے۔ یہ ہر ہندوستانی خصوصاً مسلمانوں کے لئے لمحہ فکریہ ہے۔ کسی بھی ملک کی حکومت کے پاس کسی بھی مواصلاتی میسج ایپ پر براہ راست کنٹرول نہیں ہے ، لیکن ترکی کی اس مواصلاتی پیغام ایپ پر ترک حکومت کا بالواسطہ کنٹرول سامنے آگیا ہے۔ اگر کوئی غیر ملکی حکومت کسی خاص ایپ کو چلانے میں ملوث ہے تو ہمیں محتاط رہنا چاہئے۔ یہ بتانے کی ضرورت نہیں ہے کہ ترک صدر رجب طیب اردگان خود کو مسلمانوں کا بہترین رہنما پیش کرتے ہیں اور خلافت اسلامیہ کو واپس لانے کی باتیں کرنے لگے ہیں۔ ہمیں یہ فراموش نہیں کرنا چاہئے کہ دہشت گرد گروہ داعش کے ذریعہ دولت اسلامیہ کا قیام بھی خلافت کی بحالی کی تحریک تھی۔ اس تحریک نے دنیا کے مسلمانوں کو کتنا نقصان پہنچایا ہے اس کی تلافی کبھی نہیں کی جاسکتی۔ آئی ایس آئی ایس کے خود ساختہ خلیفہ کے حکم پر کروڑوں بے گناہوں کو قتل کیا گیا جن میں زیادہ تر مسلمان تھے۔ مسلم معاشرہ بھی اس سانحے کا خمیازہ بھگتنے پر مجبور ہے۔
صدر رجب طیب اردگان دنیا کے مسلمانوں کو متحد کرکے اپنے آپ کو خلیفہ اسلام قرار دینے کے منصوبے پر کام کر رہے ہیں۔ یہ ایپ اس منصوبے کا حصہ ہوسکتی ہے۔ ایک ایسی ایپ جس کی رازداری اور ملکیت سے متعلق عالمی تفصیلات ابھی واضح کرنا باقی ہے ، یقیناً ہمیں اس کے استعمال پر غور وفکر کرنا چاہئے کیونکہ ایپ کی ترقی کے پیچھے بہت سارے مفادات ہوسکتے ہیں۔ ہمیں یہ نہیں بھولنا چاہئے کہ ایپلی کیشن کے مالک صارفین کو اپنے مفادات کے لئے استعمال کرسکتا ہے۔ نتیجہ کچھ بھی ہو ، لیکن فوری صارف مصیبت میں پڑ سکتا ہے۔یہ صرف تجارت ہو تو نظر انداز کیا جاسکتا ہے ، لیکن جب اس کے استعمال سے کسی قوم کی سلامتی پر خطرے کے بادل منڈرانے لگیں گے ، تب فطری طور پر پریشانی کھڑی ہوگی۔دوسرے اسلامی ممالک کی سیاسی سرحد وں کو مٹانے کی بات کرایک خلیفہ کا خواب بہت ہی خطرناک سوچ ہے ۔ دنیا میں ایک بار پھر دنیا میں مار۔کاٹ سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔ اس منصوبے پر ترک صدر رجب طیب اردغان کام کر رہے ہیں۔
ایسی صورتحال میں ہندوستانی مسلمانوں کو بی آئی پی ایپ کے نیٹ ورک سے گریز کرنا چاہئے یا اسے بہت محتاط انداز میں استعمال کرنا چاہئے۔ اگرچہ دوسرے مسلم ممالک کے شہریوں کو بھی اس کو سمجھنا ہوگا ، لیکن ہندوستان جیسے کثیر الثقافتی ملک کے لئے یہ بہت ضروری ہے۔ ہندوستانی مسلمان صارفین کے اعداد و شمار کو کبھی بھی عام کیا جاسکتا ہے ، جو انہیں بہت بڑی پریشانی میں ڈال سکتا ہے۔ اس بات کا امکان موجود ہے کہ ان کے اعداد و شمار کو شدت پسند تنظیموں کے ذریعہ استعمال کیا جاسکتا ہے جو بالآخر انہیں بھارتی خفیہ ایجنسیوں یا قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ریڈار پر ڈال سکتا ہے اور بعد میں بینک سرگرمیوں ، دھوکہ دہی اور جرائم پیشہ افراد کے ذریعہ رنگداری کا شکار بنائے جاسکتے ہیں۔ کیونکہ اس کی ایمانداری کی تصدیق ابھی تک دنیا کی انٹرنیٹ مانیٹرنگ ایجنسیوں نے نہیں کی ہے۔ لہذا بی آئی پی ایپ سے چوکس رہنے کی ضرورت ہے۔ آئیے یہاں آپ کو ایک اور بات بتائیں کہ ہماری مرکزی حکومت نے حال ہی میں ایک سوشل میڈیا پالیسی مرتب کی ہے اور اس پر حفاظتی نگرانی رکھی ہے۔ اگرچہ کچھ سماجی اور سیاسی تنظیموں نے اس کی مخالفت کی ہے ، لیکن قومی مفاد اور معاشرے کے مفاد کے لئے یہ بہت ضروری ہے۔ اس ملک کے شہری ہونے کے ناطے ہماری بھی ایک ذمہ داری عائد ہوتی ہے۔ ہم قومی اور سماجی تحفظ کے لئے اتنے ہی ذمہ دار ہیں جتنے اپنی حکومت اور سیکیورٹی ایجنسیاں۔ کسی بھی سوشل نیٹ ورک کو استعمال کرنے سے پہلے ہمیں اس کے عزم پر غور کرنا چاہئے۔ خاص طور پر ایسے سوشل نیٹ ورکس کا استعمال نہ کریں جو ہمارے معاشرتی تانے بانے کو نقصان پہنچاتے ہیں اور ملک کی سلامتی کو خطرہ میں ڈالتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Translate »