مذہبی سلطنت کے مقابلے کثیر المذاہب جمہوری قوم عوام کے تئیں زیادہ جوابدہ

مذہبی سلطنت کے مقابلے کثیر المذاہب جمہوری قوم عوام کے تئیں زیادہ جوابدہ

کلیم اللہ خان

ان دنوں پاکستان میں ایک نئی اسلامی مذہبی تحریک چل رہی ہے۔اس تحریک کو چلانے والے تحریک لبیک پاکستان کے نام سے پورے پاکستان  میں نئی اسلامی تحریک کھڑا کرنے کی بات کر رہے ہیں۔   اگرچہ دنیا بھر میں پاکستان  کو ایک  اسلامی قوم کے طور پر پہچان ملی ہوئی ہے۔ ، لیکن پاکستان کے ایک عالم خادم حسین رضوی صاحب نے اس تحریک کا آغاز کیا۔ رضوی صاحب کا خیال ہے کہ پاکستان صرف کہنے کیلئے  اسلامی قوم ہے ،  یہاں اسلام کی حقیقی بحالی  نہیں ہو پائی  ہے اور جب ان کی جماعت کی حکومت آئے گی تو پاکستان کو واقعتاً ایک اسلامی قوم بنایا جائے گا۔ ویسے گذشتہ دنوں  رضوی صاحب کی پراسرار موت ہوگئی۔ پاکستانی رضاکار ایجنسی آئی ایس آئی کا کردار مولانا رضوی  صاحب  کی ہلاکت میں بتایا جارہا ہے۔ رضوی صاحب کے جیسے ہی کئی مولوی وقتا فوقتا اپنے طریقوں سے اسلام کی تعریف کرتے ہیں اور اسی بنا پر وہ ملک کے انتظامی ڈھانچے کی تعمیر کی بات کرتے ہیں۔ اسی طرح کی ایک تحریک افغانستان میں شروع ہوئی ، اسے طالبان کے نام سے جانا جاتا ہے۔ طالبان جنگجو جن کے خلاف لڑ رہے ہیں یا لڑ رہےتھے وہ سب مسلمان ہیں لیکن وہ اسلامی پاکیزگی کے لئے لڑ رہے ہیں۔ داعش کے بارے میں کچھ نہیں کہنا ہے۔ اس تنظیم کے رہنما بغدادی کی بربریت کی کہانی دنیا جانتی ہے۔ گویا بغدادی کے گنڈے  جسے قتل کئے وہ سب کے سب مومن ہی تھے۔ اسامہ بن لادن ہو یا کرنل قذافی ، صدام ہو یا عنایت اللہ خامنہ ای ، یا ترکی کے صدر رجب طیب اردوان جنہوں نے نئی خلافت تحریک کو ہوا دی ، ہر رہنما نے اپنے اپنے انداز میں مذہب کی تعریف تیار کی اور اس کی بنیاد پر اسلامی قوم کی بات کی۔ یہ خود اسلام میں نہیں ہے۔ ہمارے ہندوستان میں بھی ان دنوں کچھ ہندو انتہا پسندوں نے اسی اصول کی بنیاد پر ہندو قوم کی وکالت شروع کردی ہے۔ یورم میں بھی اس نوعیت کی قوم کھڑی تھی اور اس کا زوال بھی بہت بے رحمی کے ساتھ ہوا۔

مذہب اور اقتدار کی طاقت  اچھے سے اچھے دماغ کو خراب کردیتی ہے۔ تاریخ میں اس کی بہت سی مثالیں ہیں۔ مسلم تناظر میں ، عباسی ، اموی ، عثمانی ، وغیرہ حکمرانی میں عروج کے ساتھ ساتھ مسلمانوں کے مذہبی اور اخلاقی اقدار کے خاتمے کی عمدہ مثال پیش کرتے ہیں۔ اس کے مقابلے میں غیر مسلم اکثریتی ممالک کے مسلمان ایک مسلم حکمران ملک کی نسبتاً زیادہ پُر امن زندگی گزار رہے ہیں۔ کہا جاتا ہے کہ ماضی کی غلطیوں سے سبق سیکھ کر غلطیوں کو دور کیا

جاسکتا ہے۔ سلطنت عثمانیہ کا مطالعہ اس طرف اشارہ کرتا ہے۔

جب یورپ 1700 اور 1800 کے درمیان صنعتی ہونے کی طرف گامزن تھا ، اس وقت عثمانیہ کی معیشت کمزور تھی اور زرعی بنیادوں پر چل رہی تھی۔ خواندگی کے معاملے میں عثمانیہ اپنے یورپی حریف سے بہت پیچھے تھے۔ اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ 1914 تک صرف 5 سے 10 فیصد رہائشی خواندہ تھے۔ سلطنت میں انجینئر ، کلرک ، ڈاکٹر اور دوسرے پیشہ ور افراد کی کمی تھی۔ سامنت شاہی نظام اور جاگیرداری کے نظام کی وجہ سے سلطنت میں کم قابل ، نااہل اور کمزور کو سلطنت کی دیکھ بھال کرنے کی ذمہ داری سونپی گئی تھی ، جس کی وجہ سے بدعنوانی انتہا کو پہنچی اور طاقت کا تعصب برپا ہوا۔ یہ رویہ عثمانیہ کا ایک تجارتی نشان بن گیا تھا۔ بدعنوانی اس حد تک پھیل چکی تھی کہ عہدیدار اپنے دفتر خریدتے تھے اور پھراپنی  رقم کی وصولی کے لئے عوام

 پر زیادہ ٹیکس لگاتے تھے۔

اسلامی سلطنت ہونے کے ناطے عثمانیہ خلافت اپنے وجود کو بچانے میں ناکام ثابت ہوا اور بعد میں  عطا ترک مصطفی کمال پاشا نے خلافت کا تختہ پلٹ کر  نئی ترکی کی بنیاد رکھی۔ اس تبدیلی نے ترکی کو بدلااور جدید دنیا میں ایک بار پھر ترکی زبان بولنے لگی۔ یہاں یہ واضح رہے کہ  خلافت عثمانیہ ، جو خالصتا اسلامی حکومت  تھا وہ نئی تبدیلیوں کو اپنانے میں ناکام رہی۔ خلافت میں شامل پسماندگی عثمانیہ سلطنت

کے لئے لعنت ثابت ہوئی اور اس کے زوال کا باعث بنی۔

عثمانیہ خلافت کے زوال سے مسلمانوں کو یہ سیکھنا چاہئے کہ مذہبی قانون کے تحت چلنے والی ریاست کبھی بھی کامیاب نہیں ہوسکتی کیونکہ خالصتا  مذہبی قانون تبدیلی کو قبول نہیں کرتا ہے ، جیسے عثمانیہ کا خلافت صنعتی اور حتی کہ جدید سائنسی تعلیم  کو بھی نظرانداز کیا۔  اسلامی قانون کی حکمرانی کے باوجود ریاست عثمانیہ اقربا پروری اور بدعنوانی سمیت بہت سی برائیوں سے دوچار تھی۔ اقتدار اور مذہب کی طاقت نے حکمرانوں کو ناقابل تسخیر بنا دیا تھا جس کے نتیجے میں اس  سلطنت کا خاتمہ ہوا۔ لہذا ، غلطیوں سے سبق لیتے ہوئے مسلمان خلافت کے پروپیگنڈے میں نہ پھنسیں اور جمہوری اقدار پر اپنے اعتماد کو مضبوط کریں۔

یوروپ کی مذہبی رومن سلطنت کو بھی اسی کا سامنا کرنا پڑا۔ یہ ایک بڑی سلطنت تھی جس کا مرکز یوروپ کے شہر روم میں تھا۔ سلطنت پورے جنوبی یورپ کے علاوہ شمالی افریقہ اور اناطولیہ کی سرزمین تک پھیل گئی تھی۔ اس کا حریف فارس سلطنت تھا جو دریائے فرات کے مشرق میں واقع تھا۔ اس سلطنت کے حکمرانوں نے عیسائیت کو اپنا مذہب قرار دیا۔ اس نے اس کا زوال شروع کیا۔ عیسائیت کی وجہ سے یہ سلطنت زوال پذیر ہوئی۔ یہ دنیا کی سب سے بڑی سلطنت  میں سے ایک تھی۔ پانچویں صدی کے آخر تک اس سلطنت کا زوال شروع ہوگیا تھا۔ 1453 میں  عثمانوں (عثمانی ترکوں) نے حملہ کیا اور اسے شکست دی۔ یاد رکھیں جب ترکوں نے قسطنطونیہ پر حملہ کیا تھا ، تو نہ صرف مسلمان بلکہ عیسائی اور یہودی بھی اس کے ساتھ تھے۔ یہی وجہ تھی کہ عثمانی اس جنگ کو جیتنے میں کامیاب ہوگئے تھے۔ لہذا وہ ریاستیں جو مذہب کی بنیاد پر رکھی گئیں

وہ زوال کے گڑھے میں چلی گئیں اور اس کا خاتمہ بھی انتہائی خوفناک تھا۔ وہیں  سلطنت میں رہنے والے لوگوں کو بھیانک اذیت کا سامنا کرنا پڑا۔ لہذا ہر حالت میں جمہوری اقدار سے آگاہی رکھنا اچھا ہے۔ موجودہ ہندوستانی آئین میں سب کے مفادات کی بات کی گئی ہے۔ ایسی صورتحال میں ہر ہندوستانی کو آئین کے تحفظ کا حلف اٹھانا چاہئے۔ نیز مذہب کی بنیاد پر کسی بھی قیمت پر قوم کی حمایت نہیں کی جانی چاہئے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Translate »