کیا ہزارہ شیعہ مسلمان نہیں جو ان کے خلاف مہم چلا رہا ہے پاکستانی طالبان

کیا ہزارہ شیعہ مسلمان نہیں جو ان کے خلاف مہم چلا رہا ہے پاکستانی طالبان


گوتم چودھری

امریکی صدر جو بائیڈن کے اعلان کے بعد اب یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ رواں سال کے 11 ستمبر تک شمالی اٹلانٹک سندھی تنظیم (نیٹو) اور امریکی فوجیوں کی افغانستان سے واپسی ہو جائےگی۔ ادھر امریکی فوجیوں کے انخلا کے بعد ، افغانستان میں ایک بار پھر طالبان کے سر اٹھانے کے امکان کو تقویت ملی ہے۔ اگر افغانستان میں ایک بار پھر طالبان کی طاقت بڑھ جاتی ہے تو پھر اس کا اثر ہندوستان اور پاکستان پر پڑنا طے ہے۔ ویسے بھی پاکستان طالبان کا اڈہ رہا ہے۔ تاہم جس امریکہ نے اپنے مفادات کے لئے طالبان کا کھڑا کیا اس کے جنگجو اسی کیلئے ناسور ثابت ہوئے۔ 2400 فوجی اور ڈیڑھ لاکھ کروڑروپے خرچ کرنے کے بعد اب امریکی انتظامیہ کو اندازہ ہوگیا ہے کہ افغانستان کی مہم اس کے لئے ویتنام ثابت ہوئی ہے۔ طالبان کے تبصروں اور بیانات سے یہ بات واضح ہے کہ افغانستان ایک بار پھر خانہ جنگی کا شکار ہوسکتا ہے۔ اگر افغانستان میں طالبان مستحکم ہوجاتے ہیں تو پھر پاکستان مبینہ طور پر وہاں اپنی پوزیشن مضبوط کریگا۔ صرف یہی نہیں پاکستان کا سرحدی علاقہ بھی افغان طالبان کی حمایت سے بری طرح متاثر ہوگا۔
یاد رکھیں ، جب طالبان نے افغانستان پر حکومت ہوئی تو اس نے بڑے پیمانے پر ہزارہ برادری کے شیعہ مسلمانوں کا قتل عام کیا۔ رواں سال جنوری میں بلوچستان میں گیارہ ہزار شیعہ افراد کے بے رحمانہ قتل نے اس بحث کو تیز کردیا ہے کہ ایک بار پھر امریکی فوجوں کے انخلا کے بعد افغانستان اور پاکستان کے سرحدی علاقے میں اقلیتوں کی جماعتوں کے خلاف مہم شروع ہوگی اور جس انداز میں طالبانی راج میں ان کا قتل عام کیا گیا تھا، اس کا ایک چھوٹا سا نمونہ پاکستانی طالبان نے جنوری میں پیش کیا تھا۔
بتادیں کہ 3 جنوری 2021 کو پاکستان کے بلوچستان کے صوبہ ماچ میں پاکستانی طالبان نے 11 ہزارہ شیعوں کو بے رحمی کے ساتھ ہلاک کردیا۔ نہ صرف یہ ، بلکہ مبینہ طالبان مجاہدین نے نہ صرف ان ہزاروں افراد کو قتل کیا ، بلکہ اس واقعے کی ویڈیو بھی ریکارڈ کی اور اسے سوشل میڈیا پر بھی پوسٹ کیا۔ ہلاک ہونے والے تمام شیعہ ہزارہ انتہائی غریب تھے اور مقامی کوئلہ کان میں مزدوری کر اپنے اہل خانہ کی پرورش کر رہے تھے ۔ ہندوستان کے شیعہ مسلمانوں نے اس واقعے پر زبردست رد عمل کا اظہار کیا ہے۔ اسی کے ساتھ ہی انہوں نے دنیا بھر کے شیعہ مسلمانوں سے اس واقعے کی مذمت کی اپیل کی ہے۔ اس واقعے پر حیدرآباد کے شیعہ مولوی ،مولانا ڈاکٹر نثار حسین نے الزام لگایا کہ 1987 سے 2005 کے درمیان پاکستان میں شیعوں سمیت چار ہزار اقلیتوں کو طالبان نے ہلاک کیا ہے۔ انہوں نے ان قتل عام کو وہابی نظریہ سے منسوب کیا ہے۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی اور انسانی حقوق کی تنظیموں کی متعدد تجاویز کے باوجود حکومت پاکستان اقلیتوں کی جانوں کے تحفظ میں ناکام رہی ہے۔ شیعہ مولانا علی حیدر نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ ہزارہ شیعوں کا قتل اسلام کی اعلی اور مثالی اقدار کے منافی ہے۔ انہوں نے اپنے بیان میں کہا کہ کیا حضرت علی ؓکے پیروکار مسلمان نہیں تھے اور کیا وہ انسان نہیں تھے؟ انہوں نے مجرموں کو سزائے موت دینے کا مطالبہ کیا تاکہ سخت پیغام دیا جاسکے۔ مولانا شین حیدر زیدی نے ایک بیان میں داعش اور طالبات کے حامیوں کے ذریعہ قتل ہلاک شدہ ہزارہ شیعہ متاثرین کے اہل خانہ کے لئے انصاف کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مجرموں نے مذکورہ دہشت گردی کی واردات کی ویڈیو بنائی اور اسے سوشل میڈیا پر پوسٹ کیا ، جو نہ صرف اسلام مخالف ہے بلکہ انسانیت کو داغدار بھی کرتا ہے۔ انہوں نے پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان سے انصاف کا مطالبہ کر کے مقتولین ہزاروں افراد کے لواحقین سے اظہار یکجہتی کیا۔
ادھرادارہ علما ء حیدری دارالشفا حیدرآباد نے مولانا مرزا امام علی بیگ کی سربراہی میں مارے گئے ہزارہ شیعوں سے اظہار تعزیت کیا۔ مولانا امام علی بیگ نے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے ملزمان کی گرفتاری کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ شیعہ چاہے وہ جس ملک میں رہتے ہیں، انہیں آگے آکر انسانیت کے خلاف مبینہ دہشت گردوں کے اس مکروہ فعل کی مذمت کرنی چاہئے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ دہشت گردی ، ناانصافی کے خلاف خاموش رہنے والے جرم میں برابر کے مجرم ہیں۔
تلنگانہ یوتھ کانفرنس حیدرآباد کے سید حامد حسین جعفری نے بھی اس کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت پاکستان سوگوار کنبہ کو معاوضہ ادا کرے۔ اس معاملے میں انہوں نے ہندوستان کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ مذہب ، زبان و ثقافت وغیرہ میں اتنا تنوع رکھنے کے باوجود لوگ امن سے رہتے ہیں ، جبکہ پاکستان ایک اسلامی ریاست ہے ، لیکن جو لوگ اسلام پر یقین رکھتے ہیں وہ وہاں محفوظ نہیں ہیں۔ یہ اسلامی جمہوریہ پاکستان کی ناکامی ہے۔ انہوں نے حیرت کے ساتھ پوچھا کہ پاکستان کس طرح کی اسلامی جمہوریہ ریاست ہے ، جہاں شیعہ ہزارہ محفوظ نہیں ہیں۔
بلوچستان کے سرحدی علاقے میں اکثر قتل ہوتے رہتے ہیں۔قتل بھی ان لوگوں کا ہو رہا ہے جو اسلام کے ماننے والے تو ہیں لیکن شیعہ ہیں۔ اب تو پاکستان کے ان علاقوں میں بھی امریکی فوجیوں کا افغانستان سے واپسی کا خدشہ ہے۔ خاص طور پر خواتین میں وسیع پیمانے پر خوف لاحق ہے۔ خواتین کو یہ محسوس ہونے لگا ہے کہ افغانستان میں طالبان حکومت کے دوران خواتین پر جس طرح کے مظالم ہوئے ہیں وہ ایک بار پھر دہرائے جائیں گے۔ اس کا اثر پاکستان کے اس خطے پر بھی پڑے گا۔ لہذا امریکی فوجیوں کی واپسی سے قبل ہندوستان کو اس خطرے سے خبردار رہنا چاہئے۔ اسی کے ساتھ ہی روس اور دوسرے ممالک کے ساتھ مل کر ایک ٹھوس پالیسی بنائی جائے۔ اگرچہ ابھی پاکستان کو اپنا فائدہ نظر آرہا ہوگا ، تاہم ، طالبان کا افغانی عروج پاکستان کے لئے بھی خطرناک ثابت ہوسکتا ہے۔ لہذا ، پاکستان کو بھی وقت رہتے حل تلاش کرنا چاہئے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Translate »