بھارت میں کبھی کامیاب نہیں ہو سکتے القاعدہ اور داعش

بھارت میں کبھی کامیاب نہیں ہو سکتے القاعدہ اور داعش

گوتم چودھری

ہندوستان کے بارے میں یہ کہا جا رہا ہے کہ یہ دنیا کا ایک ایسا ملک ہے ، جہاں ساری دنیا سے لوگ آئے ، اپنی سوچ کو ساتھ لائے ،ساتھ ہی وہ اپنے دیوتا کو بھی ساتھ لائے۔ جہاں سے وہ آئے تھے ، آج وہاں اسکی سوچ  دیوتا ختم ہوچکا ہے ، کوئی نام لینے والا نہیں ہے لیکن وہ ہندوستان میں زندہ ہے۔ جب ہندوستان اسلام آیا تو ہندوستان کے لوگوں نے اس کا خیرمقدم کیا۔ کسی بھی اسلامی ملک میں کوئی بھی عورت حکمرانی نہیں کرسکتی ہے ، ایسی کوئی مثال نہیں ہے ، لیکن ہندوستان میں رضیہ سلطان نے نہ صرف دہلی پر حکومت کی بلکہ اس کی حکمرانی کو پورے سلطنت کے عہد کی بہترین حکمرانی سمجھا جاتا ہے۔ 712 میں سندھ پر عربی حملے سے قبل ہندوستان کے جنوبی ساحلی علاقے کو اسلام سے تعارف ہو چکا تھا اور پہلے مرحلے میں جنوبی ہندوستان کے لوگوں نے اسلام کا زبردست استقبال کیا تھا۔ لہذا اگر آپ ہندوستانی مسلمانوں کا موازنہ دنیا کے مسلمانوں سے کریں تو  یہ مناسب نہیں ہوگا۔ برصغیر کی مٹی اور ابدی ثقافت کا ہندوستانی  مسلمانوں  پر زبردست اثر ہے۔ یہی وجہ ہے کہ جدید دنیا میں خوفناک انتشار کے بعد بھی ہندوستان کے مسلمان آج بھی اس ملک کے آئین سے وابستہ ہیں اور اس کے تحفظ کے لئے کوشاں ہیں۔

1990 کی دہائی میں القاعدہ نے دنیا بھر کے ہزاروں نوجوان مسلمانوں کو راغب کرنے میں کامیابی حاصل کی ، لیکن اس نے ہندوستانی مسلمانوں کو راغب نہیں کر پایا۔ 1980 کی دہائی میں ہزاروں مسلمان ‘جہاد ‘ کے نام پر افغان جنگ میں شامل ہوئے لیکن ہندوستانی مسلمانوں نے اس میں کوئی دلچسپی نہیں ظاہر کی۔ جب داعش کے ذریعہ عالمی سطح پر خلافت کے لئے کال  کیا گیا تو  کروڑوں کی آبادی والے ہندوستانی مسلمانوں میں سے  صرف 200 ہندوستانی مسلمانوں نے اس کال کو قبول کیا۔ تاہم یہ  بتایا گیا ہے کہ ان میں سے 25 سے کم ہی لڑنے کے لئے شام گئے تھے ، جبکہ 25 افراد کا ایک اور گروپ دولت اسلامیہ میں رہنے کے ارادے سے خراسان ہجرت کر گیا تھا ، اور باقی صرف آن لائن سرگرمی میں شامل تھے۔ بعد میں یہ بات  واضح  ہوگئی کہ جو بھی  داعش کے  لئے  جنگ لڑنے  گئے تھے  انہیں انتہا پسند نظریے سے بہت زیادہ مطلب نہیں تھا اور داعش کی جقیقت کو جانے تو فوراً  اپنے ملک واپس آنے کی تیاری میں لگ گئے۔  ایک اہم سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ القاعدہ یا داعش ہندوستانی مسلمانوں  پر بہت زیادہ اثر انداز کیوں نہیں ہو پایا؟

اس کا جواب ہندوستان کی گنگا جمنی تہذیب اور ثقافت میں ہے۔ ہندوستانی مسلمانوں نے قوم کی سیاسی اور معاشی زندگی میں پسماندہ ہونے کے باوجود ہمیشہ جہاد کے نام پر ہونے والے تشدد کو مسترد کیا ہے۔ یہ ہندوستان کی انوکھی تاریخ کا براہ راست نتیجہ ہے جس نے ہندوستانی آئین اور سیکولر جمہوریت کے ذریعہ ایک غیر معمولی کثیر الثقافت کو شامل کیا ہے۔ہندوستان کی کثیر الثقافت کی تعمیر میںجتنا تلسی، کبیر، سور، نانک اور سنت گیانیشور کا کردار ہے اتنا ہی خواجہ معین الدین چشتیؒ ، نظام الدین اولیاؒ ، خسرو ، رساخان وغیرہ صوفی سنتوں کا بھی ہے۔  اس ملک کا کوئی شہری ، ہندو یا مسلمان درگاہ اور مندر میں کوئی فرق نہیں کرتا ہے۔ در حقیقت تصوف نے کچھ صوفی کے ساتھ ہندو تصوف کے علم  کو  بھی اسلامی اور ہندو عقائد کے مابین مماثلت ظاہر کی ہے۔

ہندوستانی مسلمانوں نے ہمیشہ پاکستان جیسے مذہبی ملک کے بجائے ہندوستان جیسی جمہوری  ملک  میں یقین کیا ہے۔ زیادہ تر ہندوستانی مسلمانوں کی رائے ہے کہ وہ ہندوستانی سیکولر معاشرے میں کام کرنے کی آزادی کے سوا کچھ نہیں چاہتے ہیں۔ اگرچہ ہندوستانی مسلمانوں کو بھی سیکولر اقدار کو برقرار رکھنے میں کچھ بیرونی اور داخلی چیلنجز کا سامنا کرنا پڑا ہے ، لیکن انہوں نے صبر نہیں توڑا ہے۔ وہ معاشرے میں متحد ہو کر ملک کی ترقی میں اپنا کردار ادا کرتے رہے ہیں۔ کبھی پاکستان تو کبھی بنگلہ دیش ، کبھی عرب  تو کبھی شام ، کبھی کبھی تو ہندوستان کی اکثریتی طبقہ سے بھی انہیں  چیلینجز کا سامنا کرنا پڑا ہے۔سادہ ، پرسکون اور ترقی پسند ہندوستانی مسلمانوں نے محدود جواب کے ساتھ تمام چیلنجوں کا حل تلاش  لیا ہے۔ ملک کے کچھ حصوں میں فرقہ وارانہ پولرائزیشن اور مسلمانوں کو پسماندہ کرنے کی کوششوں کو اس خیال سے مسترد کردیا گیا ہے کہ قومی سیاست میں وہ ایک اٹوٹ برادری کی حیثیت سے کام کرتے ہیں۔

بیشتر مسلمانوں نے آئینی اداروں پر اعتماد کا اظہار کیا ہے اور وہ مظالم (اگر کوئی ہے) کے معاملے میں اکثریتی طبقہکے خلاف اجتماعی محاذ آرائی  سے انکار کرتا رہا ہے۔ ہندوستان کے مسلمان ہمیشہ آئین کو ہر مسئلے کا حل سمجھتے ہیں۔ ہندوستانی مسلمانوں کا ماننا ہے کہ ہندوستانی مسلمان تب تک محفوظ ہیں جب تک کہ آئین ہند کا اثر و رسوخ ہے۔ یہ غور و فکر مسلم کمیونٹی کی سیاسی پختگی اور ان کے گہرے قوم پرست جذبات کی تصدیق کرتا ہے۔ قومیت اور وطن کی عبادت کے معاملے میںرانچی کے عالم دین مولانا مفتی عبداللہ ازہر صاحب قاسمی کہتے ہیں کہ مادر وطن کی حفاظت ہمارا اخلاقی اور مذہبی فریضہ ہے۔ تاہم ان کا یہ بھی کہنا  ہے کہ ہم صرف اللہ کے سامنے اپنا سر جھکاتے ہیں ، لیکن اگر  مادر وطن پر کسی کی  بری نگاہ ہے تو ہم  مادر وطن  کی حفاظت کیلئے جان دینے کیلئے تیار ہیں۔

حالیہ رجحانات اور تاریخ نے یہ ظاہر کیا ہے کہ انتہا پسند گروہ ہندوستانی مسلمانوں کو اکسانے میں بری طرح ناکام ہوچکے ہیں۔ اب یہ اکثریتی طبقہ کی ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ انکی  جذبات کی قدر کریں اور انتہا پسندی اور تعصب کو روکنے کے لئے اجتماعی طور پر متحدہ محاذ تشکیل دیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Translate »