اسلام نوسنتارا : اسلام کا انڈونیشی ورژن، جو عالمی امن کا پیغام دیتا ہے

اسلام نوسنتارا : اسلام کا انڈونیشی ورژن، جو عالمی امن کا پیغام دیتا ہے

گوتم چودھری

ان دنوں نہ صرف ہندوستان میں بلکہ پوری دنیا میں اسلام کے انڈونیشین ورژن نوسنتارا پر بحث جاری ہے۔ ہندوستان سمیت دنیا کے کئی دانشوروں نے اس کی تائید کی ہے۔ ہندوستان کے ایک ہندو دائیں بازو کے رہنما نے اسے اسلام کی جدید شکل بھی قرار دیا۔ انہوں نے ہندوستان کے مسلمانوں کو اس ماڈل پر چلنے کا مشورہ دیا ہے۔ ان کی سمجھ یہ ہے کہ یہ مسلمانوں کو ان کے موجودہ بحران سے نجات دلانے میں بہت کارگر ثابت ہوگا۔ یہی نہیں بلکہ اس سے اقلیتی برادری کے باقی قوم کے ساتھ تعلقات کو بہتر بنانے میں بھی مدد ملے گی۔ آئیے اسلام کے اس انڈونیشی ماڈیول پر بات کرتے ہیں۔

انڈونیشیا کی اس اسلامی شکل کا نام اسلام نوسنتارا ہے۔ یہ اسلام کا فعال طور پر منتخب کردہ متبادل ورژن ہے جسے 2015 میں انڈونیشیا میں اسلامک دانشوروں کے ایک گروپ نے وضع کیا تھا۔ یہ داعش کے بنیاد پرست خطرے کے نتیجے میں وجود میں آیا۔ اسلام کے اس نسخے کا بنیادی ایجنڈا قوم ۔ریاست کے تصور کا دفاع اور اسلامی تعلیمات کی لبرل اقدار کی وکالت کرنا ہے، جو کسی قوم کے ثقافتی اور سیاسی پہلوؤں میں مداخلت نہیں کرتیں۔ یہ جہاد کے تصور کو قدیم اسلام کی آخری تعلیم کے طور پر مسترد کرتا ہے۔ اسلام کے اس اصلاحی ورژن کی نگرانی علماء کے ایک گروپ نے کرتی ہے جسے نہدل العلماء کہا جاتا ہے، جو انڈونیشیا کی حکومت کے ساتھ مل کر کام کرتے ہیں۔ اسلام کے اس ماڈل کی سب سے اہم خصوصیت یہ ہے کہ اس نے قومی شعور کو مذہبی نظریے کے ساتھ نہیں ملایا۔ یہ امت کے تصور کی

مخالفت کرتا ہے، جس سے مراد قوم کی سرحدوں سے باہر اسلام کے جھنڈے تلے متحد بھائی چارہ ہے۔
سچ پوچھیں تو جس طرح کا تصور انڈونیشیا کے فکری علمائے کرام نے پیش کیا ہے وہ ہندوستانی مسلمانوں کو بھی ہونا چاہیے۔ تاریخ اسلام پر نظر ڈالی جائے تو خود اسلام کے ماننے والوں نے بھی بعض غیر ذمہ دار حکمرانوں کے خلاف پرچم بلند کیا ہے۔ یہ ممکن نہیں کہ دنیا کے لوگ ایک جیسے نظر آئیں اور لباس ایک جیسا ہو۔ یہ بھی ممکن نہیں کہ دنیا کے تمام لوگ ایک ہی ثقافت کے پیرو ہوں اور ایک قومیت کی پیروی کریں۔ انڈونیشیا نے دنیا کے مسلمانوں کو راستہ دکھایا ہے۔ ایسے ہی تجربات بھارت میں بھی ہو چکے ہیں۔ چند مغل حکمرانوں کو چھوڑ کر بیشتر نے ترک خلافت کو کبھی تسلیم نہیں کیا۔ ہندوستان میں سلطانی دور میں بھی بہت سے حکمرانوں نے ایسا کیا لیکن وہ اسلام کے کٹر ماننے والے

تھے۔ ایسے میں اسلام کے لیے عربی کلچر کی کوئی ضرورت نہیں۔
جب عطاترک مصطفی کمال پاشا نے ترکی میں اقتدار سنبھالا تو اس نے قرآن پاک کا ترکی زبان میں ترجمہ کروایا۔ اگرچہ اسے تسلیم نہیں کیا گیا، لیکن دنیا کے بدلتے ہوئے نظام میں ایسا کرنا ہوگا۔ قرآن کا ترجمہ کسی دوسری زبان میں نہ بھی کروائیں، لیکن جب اسلام کسی ملک کی قومیت اور ثقافت سے متصادم ہو جائے تو وہاں کے اسلامی اسکالرز کو نرم رویہ اختیار کرنا ہو گا، ورنہ عالمی امن کے لیے خطرہ پیدا ہو جائے گا۔ اس کی بہت سی مثالیں ہمارے سامنے ہیں۔ اگر ہندوستانی مسلمان بھی اسلام کے اسی نمونے کو قبول کریں اور عربی ایڈیشن کو چھوڑ دیں تو ہندوستان کئی طرح کی مصیبتوں سے بچ جائے گا۔ پاپولر فرنٹ آف انڈیا (PFI )جیسی بنیاد پرست تنظیموں نے اکثر قوم۔ ریاست کے تصور کو کمزور کرتے ہوئے اسلامک اسٹیٹ کے ایک بنیاد پرست ورژن کو فروغ دیا ہے۔ عام طور پر علمائے کرام اسلام کو ایک جامع تصور کے بجائے ایک بنیاد پرست تصور کے طور پر پیش کرتے ہیں۔ اس سے نوجوانوں میں جنون بڑھتا ہے اور مسائل پیدا ہوتے ہیں۔ نوجوانوں کو گمراہ کیا جا رہا ہے۔ جیسا کہ اسلام نوسنتارا نے اشارہ کیا ہے، عقیدے کو مقامی بنانا انتہا پسندانہ نظریات کے امکانات کو بہت حد تک کم کر سکتا ہے۔ مثال کے طور پر، انڈونیشیا کے مدارس نے اپنے لبرل کردارکا کریڈٹ فقہ تعلیم میں بحت المسائل ماڈل کو دیا ہے، جس کی قیادت ایک عالم دین کرتے ہیں اور اس میں مرد اور خواتین دونوں شامل ہوتے ہیں۔ یہ سیکھنے کا نمونہ انڈونیشیائی مسلمانوں کو اپنے مقامی تناظر میں فقہ کی تشریح کرنے کے قابل بناتا ہے۔ ہندوستان میں بھی ایسی تشریح کی ضرورت ہے، تاکہ اسلام کو مقامی تناظر میں سمجھا جا سکے۔ صوفی روایت نے بھکتی روایت کے کئی حقائق کو اپنے ساتھ منسلک کیا ہے۔ اس سے ہندوستان میں ہم آہنگی کی

ثقافت کی ترقی میں مدد ملی۔
یہ بات بھی ذہن میں رکھنی چاہیے کہ انڈونیشیا ایک مسلم اکثریتی ملک ہے جو کسی بھی تبدیلی کے باوجود اسلام کے زیر اثر کام کرتا ہے۔ ہندوستان ایک کثیر مذہبی ملک ہونے کے ناطے انڈونیشیا کے اسلام نوسنتارا کے ماڈل کی پیروی کرنا مشکل ہوسکتا ہے۔ تاہم، ماڈل کو بھارتی ورژن میں تبدیل کیا جا سکتا ہے کیونکہ اسلامی انتہا پسندی کا مسئلہ دونوں ممالک کے لیے یکساں ہے۔ ہندوستان میں حالیہ ادے پور قتل کی طرح انڈونیشیا کو بھی 90 کی دہائی کے آخر میں مسلمانوں اور عیسائیوں کے درمیان اسی طرح کے مسائل کا سامنا کرنا پڑا۔ اسے بین المذاہب تنظیموں کی تشکیل اور تعمیری مکالمے کے ذریعے حل کیا گیا جس کے نتیجے میں اسلام نوسنتارا کی تشکیل ہوئی۔ انڈونیشیا کے ذریعہ اپنائے گئے راستے سے سیکھتے ہوئے ہندوستان کے مسلمان ہندوستانی ورژن میں تبدیل ہونے کے لیے اسلام نوسنتارا کا استعمال کر

سکتے ہیں۔ اسلام کی حوصلہ افزائی کے ساتھ ساتھ کثیر مذہبی رواداری بھی بڑھے گی۔
جیسا کہ صوفی روایت نے ہمیں سکھایا ہے کہ نفرت کا مقابلہ صرف محبت سے کیا جا سکتا ہے اور یہ محبت آسانی سے اسلام نوسنتارا فراہم کر سکتی ہے۔ حال ہی میں بہار کی راجدھانی پٹنہ کے پھلواری شریف ماڈیول کے پردہ فاش سے پورا ملک چونک گیا ہے۔ اس ماڈیول کی جانچ سے پتہ چلتا ہے کہ پاپولر فرنٹ آف انڈیا(PFI )کے کیڈر ہندوستان کو اسلامی ریاست میں تبدیل کرنے کی کوشش میں بہت تیزی سے کام کر رہے ہیں۔ اگر اس کی توسیع کو روکنا ہے تو اسلام نوسنتارا کو ہندوستانی تصوف کے ساتھ ملا کر ایک نئے اسلامی ماڈیول کو گھڑنے کی ضرورت ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Translate »